An independent think-tank

Despite a decline in terrorist violence, Pakistani Taliban and Daesh remained potent threats to Pakistan’s security – PIPS “Pakistan Security Report 2018”

979

PRESS RELEASE (Urdu Version below)

Pak Institute for Peace Studies

Islamabad/6 January 2019 

Despite a decline in terrorist violence, Pakistani Taliban and Daesh remained potent threats to Pakistan’s security – PIPS “Pakistan Security Report 2018”

  • 29% decline in terrorist attacks and 27% in consequent fatalities in 2018, compared to previous year
  • About 38% of the total 595 people killed in acts of terrorism in Pakistan in 2018 were the result of 5 lethal attacks claimed by ISIS, or Daesh, in Balochistan and KP
  • Balochistan was the only region where terrorism-related killings surged, by over 23%, when compared to 2017; most of these fatalities resulted from attacks by religiously-inspired militant groups
  • Tehreek-e-Taliban Pakistan and its affiliates and splinters carried out most of the reported attacks in 2018, followed by nationalist insurgents
  • 24 attacks were carried out on political leaders, killing 218 people and injuring 394
  • Most of the attacks took place in KP, including erstwhile FATA, but Balochistan suffered the most casualties in acts of terrorism
  • Baloch secessionist group’s usage of suicide attacks is rudimentary but alarming
  • National Internal Security Policy 2018-2023 should be made part of public debate, and Paigham-e-Pakistan, a violence-opposing decree, circulated to religious establishments
  • Questions raised on the status of banned individuals, as they continued to participate in elections, held protest, even paralyzing twin cities, and signing Paigham-e-Pakistan
  • US withdrawal from Afghanistan and Middle East rivalry can turn around militant landscape

Despite a 29% decline in terrorist attacks in 2018, Tehreek-e-Taliban Pakistan and its associated groups, which now includes ISIS’s local chapter, remains the most potent threat. They were followed by nationalist-insurgent groups, especially in Balochistan. Two suicide attacks by a Baloch secessionist group in 2018 are alarming, but these should not forego attempts of reconciling them, which National Action Plan (NAP) clearly calls upon. Any attempt of mainstreaming banned outfits should be undertaken by a proper mechanism, so as not to be seen as excluding those already mainstreamed.

These are some of the major findings of the Pakistan Security Report 2018, released by Pak Institute for Peace Studies, an Islamabad-based think-tank specializing in security and conflict dynamics of Pakistan and the region. The organization compiled its findings on the basis of its multi-source database, coupled with interviews and articles by subject experts.

The report tallied that militant, nationalist/insurgent and violent sectarian groups carried out, in all, 262 terrorist attacks in Pakistan during the year 2018 – including 19 suicide and gun-and-suicide coordinated attacks, killing 595 people, besides injuring 1,030. These attacks posted a 29 per cent decrease from the previous year.

Of these attacks, as many as 171 attacks were perpetrated by Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP), its splinter groups mainly Jamaatul Ahrar, HIzbul Ahrar and other militant groups with similar objectives such as local Taliban groups as well as ISIS, killing 449 people. Meanwhile, nationalist insurgent groups, mostly in Balochistan and a few in Sindh, carried out 80 attacks, killing 96 people. As many as 11 terrorist attacks were sectarian-related, killing 50 people and inflicted injuries on 45 others.

Significantly, more than half of these attacks, around 136, hit security and law-enforcement agencies. Meanwhile, security forces and law enforcement agencies killed a total of 120 militants in 2018 – compared to 524 in 2017 – in 31 military/security operations as well as 22 armed clashes and encounters with the militants reported from across 4 provinces.

The most ominous attacks were on political leaders and workers; in 24 attacks on them, 218 people were killed and 394 injured. The deadliest ones took place in the run-up to the polls.

The report also noted a total of 131 cross-border attacks from Pakistan’s borders with Afghanistan, India and Iran, claiming 111 lives and injuring 290 others.

Balochistan remains a centre of attention. With 354 people killed in the attacks, 59 per cent of the total toll in Pakistan took place in Balochistan. Pakistan’s border along Iran also saw some clashes, a few hinting at diplomatic blame game. Two attacks by Balochistan Liberation Army (BLA) stand out for their modus operandi. In both, the group tried to kill the Chinese workers and diplomats.

Yet, the report warns, the violence from Islamist groups like TTP and ISIS should not be conflated with that of Baloch secessionists. While religiously-inspired groups carried less attacks in Balochistan, the death toll was far greater than the secessionists’. Even some of their suicide attacks, alarming indeed, got foiled in the initial stages.

Khyber Pakhtunkhwa, including erstwhile FATA agencies, faced the highest number of terrorist attacks compared to all other regions of Pakistan. A total of 125 reported attacks from the province claimed 196 lives and inflicted injuries on another 376 people.

While NAP requires revision, the National Internal Security Policy 2018-2023 is much granular in assigning specific tasks to different government departments. It should be made part of public debate.

More importantly, in 2018, a consensus document which condemns violence in the name of religion was released. Paigham-i-Pakistan is a unanimous declaration-cum-religious decree signed by 1,800 religious scholars across the country, and backed by the state. It is to be seen how the clergy responds to it, but endorsements by members of the banned outfits raise question whether they are still embraced.

After all, in 2018, the usual cat-and-mouse game continued between state authorities and banned outfits. One set of administrative measure aimed at banning them was followed by another of unbanning them: Several banned leaders who were barred from travelling out of district, under the fourth schedule category, not only organized street protests but forced the government to remove their names. Others even tried to contest elections; when stopped, they changed the organization’s names.

Apparently, Pakistan is struggling to convince the world by projecting its anti-militant actions and ensuing sacrifices. Such claims come under question every time there is a drone strike or some erstwhile leader hold a press conference or public demonstration.

The problem is compounded with the absence of any coherent policy of reintegrating and mainstreaming certain groups. As a result, attempts at mainstreaming them are seen as deliberate attempts to excluding those already mainstreamed. More so, unqualified mainstreaming has resulted in pushing the religious discourse to the extremes, with sectarian thinking becoming a new normal.

PIPS report calls for removing any ambiguity to this end, and recommends that any process to this end should be inclusive, led by parliament, which should lay down a criteria to the pre-conditions of mainstreaming such groups. This will greatly help the government too which has to navigate through several challenges/

For one, the country is direly in need of financial bailout, and all eyes are set on the review of Financial Action Task Force (FATF) in 2019. That assessment is linked with the status of banned outfits in the country.

At the same time, new developments in the region, especially to the western side, can affect security in Pakistan too. In Afghanistan, American troops’ withdrawal from Afghanistan will have divergent consequences on global jihadist outfits present in the region. Any unclear withdrawal can provide space for Afghan Taliban, who are keen to take on their new rival, IS in the region, but have been known for being supportive of AQ.

Similarly, given the unending rivalries in the Middle East, where different countries are expected to take one side, a minor border clash in the hinterlands of Pakistan and Iran can escalate over the years. This, the report notes, should be studied too.

The report also calls for empowering civilian-led law-enforcement apparatus. It was in this spirit that the role of NACTA has been critical, a focal body of relevant intelligence feeds. Instead of empowering this body under the direct chairpersonship of the Prime Minister, proposals have been floating in 2018 to either abolish NACTA completely or undo its backbone, Joint Intelligence Directorate. PIPS report calls for revisiting such thoughts.

# # #

For any detail, please contact:

Muhammad Ismail Khan
Pak Institute for Peace Studies
0333-5370904
ismail@pakpips.com

 

 پپس پاکستان سیکورٹی رپورٹ 2018

۔  سال 2018 میں گذشتہ سال کے مقابلے میں  دہشتگردی کے واقعات میں 29 فیصد کمی ہوئی ہے اور دہشتگردی کے واقعات میں ہونےوا لی اموات  کی تعداد میں 27 فیصد کمی واقع ہوئی ہے ۔
۔ بلوچستان میں دہشتگری کے واقعات میں سال 2018 کے دوران گذشتہ سال کی نسبت 23 فیصد اضافہ دیکھا گیا ۔ ان واقعات میں اکثر کی ذمہ داری  مذہبی انتہاءپسند گروہوں نے قبو ل کی ۔
۔ ٹی ٹی پی  اور اس کے وابستہ گروہوں نے سال 2018 میں ہونے والے دہشتگردی کے واقعات میں اکثر کی ذمہ داری قبول کی ۔ ان کے بعد دوسرے نمبر پہ دہشتگردی کے واقعات میں علیحدگی پسند تحریکیں ملوث رہیں ۔
۔ سب سے زیادہ حملے خیبرپختونخواہ اور اس سے ملحقہ سابقہ فاٹا میں ہوئے ۔ تاہم دہشتگردی کے حملوں میں سب سے زیادہ افراد بلوچستان میں مارے گئے۔
۔ اس سال نئی پیش رفت بلوچ قوم پرست مسلح گروہوں کی جانب سے خودکش حملوں کا استعمال تھا جو کہ خطرناک رجحان کی عکاسی ہے۔
۔ افغانستان سے امریکی افواج کا انخلا ء اور مشرق وسطیٰ میں تنازعات ایک نئی متشدد لہر کا باعث بن سکتے ہیں ۔  

اسلام آباد(پے آر)    اگرچہ سال 2018 میں دہشگردی کے واقعات میں گذشتہ سال کی نسبت 29 فیصد کمی آئی تاہم تحریک طالبان پاکستان اور اس سے وابستہ گروہ  نام نہاد  دولت اسلامیہ ایک مہلک خطرہ بنے رہے ۔ بلوچ قوم پرست متشدد عناصر کی جانب سے اس سال میں 2 خودکش حملے بہت خطرناک رجحان ہیں تاہم اس کی وجہ سے ان کے ساتھ مصالحت کی پالیسی کو ترک نہیں کیا جانا چاہیئے جو کہ نیشنل ایکشن پلان کا ایک واضح حصہ ہے۔
یہ پاکستان کی سیکورٹی رپورٹ 2018 کے چند اہم نکات ہیں جسے پاک انسٹی ٹیوٹ فار پیس اسٹڈیز نے جاری کیا ہے ۔ ادارے کے دائرہ کار میں پاکستان اور خطے کی سیکورٹی اور تنازعات کی جہتوں کا جائزہ لینا شامل ہے۔

اس رپورٹ کے اعداد وشمار کے مطابق سال 2018 میں پاکستان کے 64 اضلاع میں نسلی مسلکی اور مذہبی دہشتگردی کے 262 واقعات ہوئے ۔ جن میں 19 خودکش حملے شامل تھے جن کے نتیجے میں 595 ہلاکتیں ہوئیں اور 1030 افراد زخمی ہوئے۔ اس طرح ملک میں دہشتگردی کے واقعات میں  سال 2017 کے مقابلے میں سال 2018 میں 29 فیصد کمی ہوئی۔

دہشتگردی کے ان حملوں میں سے 171 حملے تحریک طالبان یا اس سے علیحدہ ہونے والے گروہوں جماعت الاحرار اور اس جیسے اور گروہوں مقامی طالبان اور نام نہاد دولت اسلامیہ  وغیرہ نے کیےاور ان حملوں میں 449 افراد ہلاک ہوئے ۔ جبکہ بلوچ علیحدگی پسند حملوں میں 96 افراد ہلاک ہوئے ۔ ان حملوں کی تعداد 80 تھی ۔ ملک میں فرقہ وارا نہ دہشتگردی کے کل 11 واقعات ہوئے اور ان میں 50افراد ہلاک جبکہ 45 زخمی ہوئے۔

اہم امر یہ ہے کہ دہشتگردی کے کل واقعات میں سے 136ایسے تھے  جن میں براہ راست قانون نافذ کرنے والے اداروں کو نشانہ بنایاگیا ۔ جبکہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کی کاروائیوں کے دوران 120 مسلح دہشتگرد ہلاک ہوئے ۔ جبکہ سال 2017 میں یہ تعداد 524 تھی۔ ملک کے چاروں صوبوں میں سیکورٹی اداروں  نے مسلح عناصر کے خلاف  31کاروائیاں کیں جن میں سے22 مسلح تصادم کے واقعات تھے۔

دہشتگردی کی سب سے زیادہ مہلک کاروائیاں سیاسی رہنماؤں اور کارکنوں کے خلاف کی گئیں ۔  سال 2018 میں انتخابی مہم کے دوران  24 دہشتگرد حملے ہوئے جن میں 218 افراد مارے گئے جبکہ 394 افراد زخمی ہوئے ۔

اس رپورٹ میں پاکستان کی افغانستان ، ایران اور بھارت کی سرحدوں پر 131 حملے رپورٹ ہوئے جس میں 111 افراد مارے گئے  اور 290 زخمی ہوئے ۔

امن و امان کی صورتحال کے متعلق  بلوچستان اس سال بھی توجہ کا مرکز رہا ۔یہاں 354 افراد دہشتگرد حملوں میں مارے گئے جو کہ ملک بھر میں مارے گئے افراد کی کل تعداد کا 59 فیصد ہیں ۔ پاک ایران سرحد پہ بھی کشیدگی دیکھی گئی جس کے سبب سفارتکاری کی سطح پر بھی تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا ۔  بلوچستان لبریشن آرمی کی جانب سے 2 حملے ان کی روایتی کاروائیوں سے مختلف تھے جن میں انہوں نے چینی سفارتکاروں اور کارکنوں کو نشانہ بنانے کی کوشش کی ۔

رپورٹ میں خبردار  کیا گیا ہے کہ  مذہبی انتہاء پسند متشدد عناصر اورعلیحدگی پسنددہشتگردوں کو ایک نظر سے نہ دیکھا جائے  اگرچہ بلوچستان میں مذہبی انتہاء پسندی کی کاروائیاں تعداد میں کم ہیں تاہم ان میں مارے جانے والے افراد قوم پرستوں کے دہشتگرد حملوں سے کہیں زیادہ ہیں ۔ نیشنل ایکشن پلان کے اس نقطے جس میں قوم پرست دہشتگرد عناصر سے مصالحت پہ زور دیا گیا ہے تاحال اس پہ کوئی قرار واقعی کوشش نہیں ہوئی ۔

خیبر پختونخواہ بشمول سابقہ فاٹا ریجن میں ملک بھر  میں ریکارڈ کئے گئے دہشتگرد حملوں کی سب سے زیادہ کاروائیاں ہوئیں ۔ دہشتگردی کی 125 کاروائیوں میں 196 افراد  مارے گئے جبکہ 376 زخمی ہوئے ۔

اگرچہ نیشنل ایکشن پلان پہ نظر ثانی کی ضرورت ہے تاہم قومی سلامتی کی داخلہ پالیسی  2018 تا 2023  میں بھی اداروں کی واضح ذمہ داریوں کے تعین میں ابہام پایا جاتا ہے۔ اس کو موثر بنانے کے لئے اس پرپالیسی مکالمے کی ضرورت ہے ۔

اہم نکتہ یہ ہے کہ سال 2018 کے دوران ملک بھر کے 1800 سے زائد علمائے کرام نے ایک متفقہ فتویٰ جاری کیا جس میں مذہب کے نام پر تشدد کو حرام قرار دیاگیا ۔ اس فتویٰ کو ریاست کی تائید بھی حاصل ہے ۔ اگرچہ اس پر تمام علمائے کرام کی رائے کا سامنے آنا ابھی باقی ہے لیکن کالعدم جماعتوں کے رہنماؤں کی جانب سے اس کی تائید  سے پیغام پاکستان کی حیثیت پر سوالات اٹھائے جا رہے ہیں ۔

سال 2018 کے دوران بھی حکومت اور کالعدم جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان چوہے بلی کا کھیل جاری رہا۔ اگر کسی ایک حکومتی ادارے نے ان کی سرگرمیوں پہ پابندی لگائی تو کسی دوسرے ادارے نے انہیں اس پابندی سے آزاد کردیا ۔ بہت سے ایسے رہنماء جن کا تعلق کالعدم جماعتوں سے تھا ، جن کے نام فورتھ شیڈول میں شامل تھے   اوران پر اپنے اضلاع سے باہر جانے پر پابندی تھی انہوں نے نہ صرف اپنے اضلاع سے باہر جا کر  سڑکوں پہ احتجاج اور جلاؤ گھیراؤ کیا بلکہ حکومت کو مجبور کیا کہ وہ ان کے نام فورتھ شیڈول سے خارج کرے۔ ان میں سے بعض نے انتخابات میں بھی حصہ لیا اور جب ان کی جماعتوں پر انتخابات میں شامل ہونے پر پابندی لگائی گئی تو انہوں نے اپنی جماعتوں کے نام بدل لئے۔

بظاہر پاکستان کو اس سال بھی عالمی دنیا کو انتہاء پسندی کے خلاف اپنی جنگ اور کامیابیاں منوانے میں مشکلات کا سامنا رہا۔ پاکستان کی ان کوششوں پر اس وقت سوال اٹھایا جاتا رہا جب بھی کسی دہشتگرد کے خلاف ڈرون حملہ ہوا یا کسی کالعدم رہنماء نے عوامی سطح پر پریس کانفرنس کی  یا عوامی احتجاج کیا ۔

رپورٹ میں بیان کیا گیا ہے کہ ان مسائل کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ پاکستان میں تاحال میں کچھ گروہوں کو قومی سطح کےمرکزی دھارے میں شامل کرنے کی پالیسی پر اتفاق رائے نہیں ہوسکا ۔ پپس کی رپورٹ کے مطابق  حکومتی سطح پر اس ابہام کو فی الفور ختم کرنے ضرورت ہے اور یہ تجویز دی گئی ہے کہ کالعدم جماعتوں کو قومی دھارے میں شامل کرنے کی پالیسی کے بنیادی نکات میں تمام گروہوں کو بلاتعصب شامل کیا جائے  اور اسے  پارلیمان کے تحت ترتیب دیا جائے ۔  پارلیمان  ان جماعتوں  کے لئے باقاعدہ قواعد ضوابط ترتیب دے جن پر عمل پیرا ہونا لازمی قرار دیا جائے ۔ اس طرح حکومت کے لئے اس معاملے پر کوئی ایک اتفاق رائے قائم کرنے میں آسانی ہوگی جسے اس معاملے پر بہت سے چیلنجز کا سامنا ہے ۔

ملک میں اس وقت معیشت کی بہتری کی ضرورت سب سے زیادہ ہے اور اس مقصد کےلئے تمام توجہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کی نظرثانی رپورٹ پہ لگی ہوئی ہیں ۔ اس رپورٹ میں مثبت پہلو کا انحصار کالعدم جماعتوں سے متعلق ریاستی پالیسی پر ہے ۔

اس دوران خطے میں ہونے والی علاقائی تبدیلیوں ، خاص طور پر مغربی ممالک کی جانب سے اپنی پالیسیوں پر نظرثانی کے سبب بھی پاکستان میں سیکورٹی کے معاملات پر اثرات مرتب ہونے ہیں ۔ افغانستان سے امریکی افواج کا انخلاءاس خطے میں موجود جہادی عناصر پر عالمی توجہ کے ہٹنے کی صورت میں ظاہر ہوگا۔ امریکی افواج کے ہنگامی انخلاء کی صورت میں افغان طالبان کو  بڑی کامیابیاں ملنے کی توقع ہے جن کی  پوری توجہ اپنے نئے دشمن نام نہاد دولت اسلامیہ کے خلاف مرکوز ہوجائے گی۔ تاہم یہ امر نہیں بھولنا چاہیئے کہ افغان طالبان القاعدہ کے حمایتی رہے ہیں ۔

مزید تفصیلات کے لئے رابطہ کیجئے

محمد اسمعیل خان
پاک انسٹی ٹیوٹ فار پیس اسٹڈیز

ismail@pakpips.com

Comments
Loading...